الف نون


آنگلو بانگلو، ہیکل  اینڈ جیکل ، چلوسک ملوسک کے    کارناموں سے سجی کہانیاں آپ میں سے اکثر نے پڑھ یا سن رکھی ہونگی ، اب ان دادی جی کے زمانے والی کہانیوں سے باہر آ جائیے ، کیونکہ میں لایا ہوں آپ کیلئے الف اور نون کے کرتوت  نما کارنامے۔ مثل مشہور ہے  "اللہ ملائی جوڑی ، اک انھا تے اک کوڑھی” لیکن خبردار !!!الف اور نون پر یہ مثل  فٹ  نہیں آتی، نہ ہی کوئی فٹ کرنے کی کوشش کرے  ۔
ان سے ملیے اس لم ڈھینگ کانام والدین نے  اویس  قرنی پتا نہیں کیا سوچ کر رکھا تھا ، قد چھ فٹ ایک انچ تین سوتر ہے ، اپنے محلے کی واحد شخصیت ہے جو خدانخواستہ کبھی نہا کر باہر آجائے تو لوگ اپنے کام ادھورے چھوڑ کر  "عید مبارک” کہتے ہوئے  ایک دوسرے سے لپٹ جاتے ہیں ،  دنیا صرف دو سو عورتوں کی عزت کرتا ہے  ،  اور باقی خواتین سے یہ واقف نہیں  ۔  اور اس عجیب و غریب و مسکین  انسان کا نام نیرنگ  یعنی نین ہے ، جسم بالکل پتلا اور سوکھا ہوا جس پر  رکھا ہواایک منحنی سا چہرہ عجیب بہاریں دکھا رہا ہوتا ہے ، جیسے کسی کیلے کو چھیل کر اس کے اوپر سیب رکھ دیا گیا ہو اگر اس کے جسم میں تھوڑی سی چربی ، خون اور کافی سارا گوشت بھر دیا جائےاور  رنگ تھوڑا سا سفید نہیں تو سانولا ہی ہو جائے توامید ہے  ایک صحت مند انسان نظر آئے گا۔
دونوں ہی تعلیم یافتہ مگر بیروزگار ہیں ، اور خیر سے محلے دار ہیں   ۔ پھٹکارنے اور کوسنے میں آسانی کی خاطردنیا نے  ان بھلے مانسوں کا نام  الف اور نون رکھ چھوڑا ہے۔ جمعہ  پڑھنے مسجد  کی طرف جا رہے ہوں تو یوں لگتا ہے جیسے چندہ مانگنے جا رہے ہیں ۔ جب مسجد میں داخل ہوتے ہیں تو امام مسجد ان پر نظر پڑتے ہی لوگوں کو بتا دیتا ہے کہ جیب کتروں سے ہوشیار رہیں ۔ عید کے دن کسی سے گلے ملنے کی کوشش کریں تو گلے ملنے والا سب سے پہلے تو اپنی جیب سے ساری چیزیں نکال کر دوسرے کو پکڑاتا ہے، پھر ان سے گلے ملتا ہے ۔ کبھی کبھار فاتحہ پڑھنے قبرستان جا ئیں تو یوں لگتا ہے جیسے چرس پینے جا رہے ہیں۔ پڑھنا جاری رکھیں→